خاموشی کو باتیں کرتے

Poet: حیاء غزل
By: Haya Ghazal, Karachi

خاموشی کو باتیں کرتے سناٹوں سے دیکھا ہے
دریچوں کو بےکارالجھتے چوباروں سےدیکھاہے

رشتےمحبت کےجیسے اب خواب ہوئےجاتےہیںسب
دوریوں کو بڑھتے ہوئے دیواروں سے دیکھا ہے

برس ہے بیتاتم سےبچھڑکریہ آیابھی بیت نہ جائے
وعدہ کرکے توڑتے اسکو دیوانوں سے دیکھا ہے

بےمعنی ہوجاتی ہے بلکل بنالگن ہر اک جستجو
چاہ کیسےکی جاتی ہے یہ پیاسوں سے دیکھا ہے

کیوںکہتے ہواجڑگیاہےشہرنہیں یہ ویرانہ ہے
آتے جاتے کئ لوگوں کو راہداروں سےدیکھاہے

شاخوںپربیٹھےپنچھی گیت سناتے اب بھی ہیں
نئ امیدوں کےپھول کوکھلتے باغیچوںسےدیکھاہے

لیئےتمناساحل کی ڈوب نہ جائےکشتی بھنورمیں
ملاحوں کواسلیئےاکثرلڑتے طوفانوںسےدیکھاہے

رہتانہیں سب کچھ ہمیشہ اک جیسا ہی حیاء
وقت کوخود کروٹ بدلتے ان آنکھوں نےدیکھاہے

Rate it:
15 Jan, 2015

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Haya Ghazal
I am freelancer poetess & witer on hamareweb. I work in Monthaliy International Magzin as a buti tips incharch.otherwise i write poetry on fb poerty p.. View More
Visit 133 Other Poetries by Haya Ghazal »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City