دسمبر آگیا ہے پھر طبیعت میں اُداسی ہے

Poet: Sarfraz Abdi
By: huma, khi

دسمبر آگیا ہے پھر طبیعت میں اُداسی ہے
بدن سیراب ہوتے ہیں مگر یہ رُوح پیاسی ہے

میں اُن سے پُوچھنا تو چاہتا ہوں کہہ نہیں پاتا
کہ آخر کس لیے مجھ سے وہ اِک ہستی خفا سی ہے

محبت زندگی ہے موت اس کو آ نہیں سکتی
خُدا جانے خُدا کیا ہے محبت تو خُدا سی ہے

اُداسی کا سبب کیا پوچھتے ہو کیا کہوں تم سے
نظر آتی ہے لمبی زندگی لیکن ذرا سی ہے

چلی مشرق سے مغرب کو دسمبر کی ہوا ایسے
کہ جیسے خود اُداسی میں ہوا بھی مبتلا سی ہے

پڑی ہے جان کے پیچھے بتاؤں نام کیا اُس کا
مگر جو بھی ہے جیسی ہے قیامت ہے بلا سی ہے

دسمبر کی ہوا راتوں کو سائیں سائیں کرتی ہے
یُوں لگتا ہے اُداسی بھی ہوا کی ہمنوا سی ہے

جو اُن سے گفتگو کی سرفراز ان کی غزل ٹھہری
وگرنہ تو اُداسی ہے یا میری بد حواسی ہے

Rate it:
23 Nov, 2019

More December Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City