دلبری اور دلگی

Poet: Syed Ali Abbas Kazmi
By: Syed Ali Abbas Kazmi , Sahiwal

دلبری اور دلگی احساس ہیں دو جدا جدا

دلبری میں انجمن سے
وہ عشق سا ہے جدا جدا
دلگی میں یار بھی
ہیں بے بہا اور جدا جدا

دلبری کی وہ قُربتیں
وہ پاس بھی ہے جدا جدا
دلگی میں وہ ہجرتیں
وہ یاس بھی ہے جدا جدا

دلگی اور دلبری مزاج ہیں دو الگ تھلگ

دلگی کی محفلوں
کا جواز بھی ہے الگ تھلگ
دلبری کی مجلسوں
کا سواد بھی ہے الگ تھلگ

دلگی میں بس راحتیں
پھر سسکیاں ہی الگ تھلگ
دلبری کی رفاقتیں
پھر ہنسیاں ہی الگ تھلگ

دلبری اور دلگی کیوں جدا جدا ہیں الگ تھلگ

دلبری اور دلگی ہو جائیں گر جو مشترک
نہ دلبری جدا جدا نہ دلگی الگ تھلگ

دلبری میں ہے چاہ ہی چاہ
دلگی میں ہے صرف چاہ

چاہ چاہ سے بڑھے چاشنی احساس اور مزاج میں
پھر دلبری اور دلگی نہ جدا جدا نہ الگ تھلگ

Rate it:
22 Jun, 2020

More Friendship Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Ali Abbas Kazmi
Visit 39 Other Poetries by Syed Ali Abbas Kazmi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City