شہر عداوت

Poet: مونا شہزاد
By: Mona Shehzad, Calgary

یہ عداوتوں کا شہر ہے
یہاں تہمتوں کے انبار ہیں
یہاں بدگمانیوں کے پہاڑ ہیں
یہاں لہجے خارزار ہیں
یہاں نفرتوں کے ہار ہیں
یہاں غلام روحوں کی ہے حکومت
ان کے زہرآلود لہجوں سے
دل و روح گهٹے جارہے ہیں
ہم سب مرده سے جئے جارہے ہیں
ان غلام روحوں کو ہے بس اک آرزو،
لوٹ لیں وه ہم سے ہماری خودی ،
اسی تمنا میں بس سب ہی اندها دهند لڑے جارہے ہیں
سن لو! اے غاصبوں!
تم جیت کر بھی ہارو گے
اور ہم ہار کر بھی جیتنگے
اسی لیے تو خاموشی سے
وار پر وار کهائے جارہے ہیں
بهلا ان کی رہنمائی کیسے کرئے کوئی؟
وصف خضری جو ہوجائے عط
مشکل شاید اس ملت کی ہوجائے حل،
آجائے کوئی عیسی'
شاید کوڑھیوں کو آرام آجائے

Rate it:
27 Apr, 2018

More Patriotic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Mona Shehzad
I used to write with my maiden name during my student life. After marriage we came to Canada, I got occupied in making and bringing up of my family. .. View More
Visit 109 Other Poetries by Mona Shehzad »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City