صحرا میں کوئی سایۂ دیوار تو دیکھو

Poet: Jazib Qureshi
By: tariq, khi

صحرا میں کوئی سایۂ دیوار تو دیکھو
اے ہم سفرو دھوپ کے اس پار تو دیکھو

جلتا ہوں اندھیروں میں کہ چمکے کوئی چہرہ
موسم ہیں عداوت کے مگر پیار تو دیکھو

دفتر کی تھکن اوڑھ کے تم جس سے ملے ہو
اس شخص کے تازہ لب و رخسار تو دیکھو

کیوں مانگ رہے ہو کسی بارش کی دعائیں
تم اپنے شکستہ در و دیوار تو دیکھو

کل شام وہ تنہا تھا سمندر کے کنارے
کیا سوچ رہے ہو کوئی اخبار تو دیکھو

آنکھیں ہیں کہ زخمی ہیں بدن ہیں کہ شکستہ
آشوب سفر ہوں مری رفتار تو دیکھو

Rate it:
16 Feb, 2020

More Jazib Quraishi Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City