عجب معمول ہے آوارگی کا

Poet: Aftab Shakeel
By: Kashaf, khi

عجب معمول ہے آوارگی کا
گریباں جھانکتی ہے ہر گلی کا

نہ جانے کس طرح کیسے خدا نے
بھروسہ کر لیا تھا آدمی کا

ابھی اس وقت ہے جو کچھ ہے ورنہ
کوئی لمحہ نہیں موجودگی کا

مجھے تم سے بچھڑنے کے عوض میں
وسیلہ مل گیا ہے شاعری کا

زمیں ہے رقص میں سورج کی جانب
چھپا کر جسم آدھا تیرگی کا

میں اک ہی سطح پر ٹھہروں گا کیسے
اترتا چڑھتا پانی ہوں ندی کا

میں مٹی گوندھ کر یہ سوچتا ہوں
مجھے فن آ گیا کوزہ گری کا

کھٹک جاؤں گا صوفے کو تمہارے
میں بندہ بیٹھنے والا دری کا

میں اس منظر میں پایا ہی گیا کب
جہاں بھی زاویہ نکلا خوشی کا

سمندر جس کی آنکھوں کا ہو خالی
وہ کیسے خواب دیکھے جل پری کا

نکالو کیل کو دیوار میں سے
وگرنہ ٹانگ لو فوٹو کسی کا

Rate it:
14 Feb, 2020

More Aftab Shakeel Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City