مجھے ہنسنے کی عادت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

Poet: Dua Ali
By: sana, khi

مجھے ہنسنے کی عادت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا
ذرا سی اک شرارت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

مری ہر بات پر ہنسنے سے اکثر وہ الجھتا تھا
مجھے اس سے محبت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

میں ہنستی تھی کہ رنج و غم مرا ظاہر نہ ہو اس پر
مقدر میں جو ظلمت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

میں سن کر ٹال جاتی تھی نصیحت کی سبھی باتیں
مری دل سے بغاوت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

سنانا حال دل چاہا مگر اس کو بھی جلدی تھی
بڑی اچھی حکایت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

منانا چاہتی تھی سچے دل سے اے دعاؔ اس کو
اسے مجھ سے شکایت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

Rate it:
16 Feb, 2020

More Dua Ali Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City