مرثیہ

Poet: Syed Ali Abbas Kazmi
By: Syed Ali Abbas Kazmi , Sahiwal

اِک زمیں جو بے ذرّر سی تھی
ویران و بیابان سا تھا میدانِ کربلا

نبیوں کا راہ گزر رہی نینوا جہاں
زخم و مصائب ملے تھا میدانِ کربلا

مرضی خدا یہ تھی معلّہ بنے زمیں
بنے کربلا معلّہ جو تھا میدانِ کربلا

زمینِ کربلا میں بہت تشنگی سی تھی
صحرا و گرم ریت پر تھا میدانِ کربلا

پانی فرات بھی یوں بے دریغ بہتا رہا
مرگِ العتش ہوئی وہ تھا میدانِ کربلا

خاطرِ دینِ خدا حُسینیت لُٹی جہاں
آل نبی نے سر دئیے تھا میدانِ کربلا

بھائی بیٹے مہماں جواں نادان بھی
گھر لُٹا شبیر کا وہ تھا میدانِ کربلا

لاشے تپتی ریت پر بکھرے پڑے تھے وہاں
طفلِ ششماہ کا خوں بہا تھا میدانِ کربلا

گھوڑے تک دوڑا دئیے لاشوں پے یزید نے
رت کے پیوند تھے وہ تھا میدانِ کربلا

خیموں کو جلا دیا چادریں بھی لُوٹ لیں
حجابِ خدا تھیں بے ردا تھا میدانِ کربلا

بے کفن بے دفن لاشوں کو بے سر چھوڑ کر
اسیر تھا اک قافلہ اور تھا میدانِ کربلا

آباد ہونا تھی کربلا آل نبی کے خون سے
کنبہ نبی کا لُٹ گیا وہ تھا میدانِ کربلا

نینوا کی مٹی بھی بن گئی خاک شفاء
کربلا معلّہ ہوئی جو تھا میدانِ کربلا

کربلا بُلا مولا منِ التجا ہے ساک کی
پُرسہ آل نبی کو دوں خود جا میدانِ کربلا

Rate it:
28 Jun, 2020

More Islamic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Ali Abbas Kazmi
Visit 39 Other Poetries by Syed Ali Abbas Kazmi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City