من از کجا

Poet: ابنِ مُنیب
By: ابنِ مُنیب, سکاکا

(مولانا رومی کے شعر "من از کجا،پَند از کجا، بادہ بگرداں ساقیا" کی پیروی میں چند اشعار۔ تجرباتی طور پر مختلف زبانوں کو قدرے آزادی سے مکس کیا ہے)

"من از کجا، پَند از کجا، بادہ بگرداں ساقیا"
ہے سُرخ رُو سے سُرخرُو پیمانہِ جاں ساقیا

ہے عیب اِس میں کیا بھلا؟ کیسی حیا؟ کُھل کر پِلا
جانے خدا، ظالم بڑا ہے دردِ ہجراں ساقیا

اے نامہ بَر، با چشم تر، دینا اُسے میری خبر
تجھ فیض بِن بنجر نظَر، اور دل ہے ویراں ساقیا

وَجْہَک اَمَل، صوتَک عَسَل، اَنتَ الحَیاۃ، اَنتَ الاَجَل
تُو درد ہے، ہمدرد ہے، اور تُو ہی درماں ساقیا

تُوں عشق وی، تُوں یار وی، تُوں ساحل و منجدھار وی
دریا بھی تُو، کشتی بھی تُو، اور تُو ہی طوفاں ساقیا

جس حال میں لے چل ہمیں، جس جال میں لے چل ہمیں
تُو راہبر، تُو راہزن، تُو ساز و ساماں ساقیا

Rate it:
06 Mar, 2020

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ibnay Muneeb
https://www.facebook.com/Ibnay.Muneeb.. View More
Visit 152 Other Poetries by Ibnay Muneeb »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City