موٹی محبوبہ میری عرض سنو

Poet: محمد اطہر طاہر
By: Athar Tahir, Haroonabad

میں تھا تمہارے عقب میں
میں نے دیکھا اوٹ سے
تم جھکے اور کھڑے ہوگئے,
ایک کپڑا آستیں کا
اٹک ساگیا تھا
تمہاری کمر کے ذرا سا اوپر
ٹھہر گیا سا تھا
جیسے کہ رکھا ہو ذوق سے
میں نے دیکھا میں نے سوچا
یہ کمر تو ہر دن بڑھی جارہی ہے
جیسے خود سے گھڑی جارہی ہے
کمر سے کمرہ ہوئی جا رہی ہے
حد سے تجاوز کیے جارہی ہے
یہ ہی سلسلہ رہا قائم اگر
حسن کو ماند کردے گی یہ مگر
دل میں آیا کہ مشورہ دوں کوئی
پھر یہ بھی سوچتا ہوں بے ادبی نہ ہو
کیا بتاوں تجھے اے میری جانجاں
تیری کمر ہی تو میرا خواب ہے
اک اسی میں تو ہیں میری دلچسپیاں
برا نہ مانو میری بات کا
خدارا اس کا کوئی حل کرو

Rate it:
15 Nov, 2015

More Funny Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Athar Tahir
Visit 114 Other Poetries by Athar Tahir »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City