مُحبّت گر حقیقی ہو خسارہ ہو نہیں پاتا

Poet: Shah Saad
By: Shah Saad, Karachi

اُفق سے ٹوٹ جاتا ہوں ستارہ ہو نہیں پاتا
وہ ہر دم پاس ہے پھر بھی ہمارا ہو نہیں پاتا

ہماری ہی بخطا ہے ہم قدر کرتے نہیں اُس کی
وگرنہ اُس کی نعمت کا شُمارا ہو نہیں پاتا

کرم اُس رب کے ہر ہر شے پہ آئینگے نظر تُم کو
خُدا کے غیر سے یہ کار سارا ہو نہیں پاتا

کبھی شر کو کرے پیدا کبھی خیروں کو برساۓ
کسی پر بھید اُس کا آشکارا ہو نہیں پاتا

لگا دو زندگی اپنی ، جوانی بھی محبت پر
مُحبّت گر حقیقی ہو خسارہ ہو نہیں پاتا

ذرا حرکت میں آجاتی ہے جب انصاف کی لاٹھی
کہیں پر ظالموں کا پھر سہارا ہو نہیں پاتا

نہ ہو اُمّت میں گر وحدت سفینہ ڈوب جاۓ گا
شکستہ ناؤ کو حاصل کنارہ ہو نہیں پاتا

کُھلی آنکھوں میں بندش ہے جہاں ہیں اور بھی پیارے
حقیقت ہے حقیقت کا نظارہ ہو نہیں پاتا

امیری ہو غریبی ہو فقیری ہو کہ شاہی ہو
سفر یہ زندگی کا پھر دوبارہ ہو نہیں پاتا
 

Rate it:
18 Oct, 2020

More Islamic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Shah Saad
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City