میرا بھی ان کو سلام کہنا

Poet: Kashif Imran
By: Kashif Imran, Mianwali

نبیﷺ کے در پہ جانے والے
سر کو اپنے وہاں جھکانے والے
بیٹھ کر سبز گنبد کی چھاؤں میں
داستاں اپنی سنانے والے
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
در، در ہم تو پھر رہے ہیں
اپنی ہی نظروں سے گر رہے ہیں
راہ اپنی کھوئی ہوئی ہے
قسمت اپنی سوئی ہوئی ہے
راہ اپنی پانے والے
قسمت اپنی جگانے والے
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
کیا کہوں میں، کیا کر رہا ہوں
روز جی، جی کے مر رہا ہوں
مانا کہ مجھ میں ہر کمی ہے
پھر بھی آقاﷺ پہ نظر جمی ہے
حالِ دل وہاں سنانے والے
نظر اپنی وہاں جھکانے والے
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
زندگی گناہوں سے بھر پور ہے
منزل میری اب بہت دور ہے
مراد اپنی کوئی، بر آتی نہیں ہے
راہ اب کوئی نظر آتی نہیں ہے
مراد اپنی پانے والے
کلی دل کی کھلانے والے
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
خطا پر خطا کئے جا رہا ہوں
بے عمل زندگی جئے جا رہا ہوں
گناہوں نے دل کو سیاہ کر دیا ہے
نہ جانے کیاسے کیا کر دیا ہے
خطاؤں کو اپنی مٹانے والے
زندگی اپنی بنانے والے
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
آقاﷺ کاامتی ہوں، وہی بھرم رکھیں گے
وہی میری سنیں گے، وہی کرم کریں گے
عشقِ مصطفی کی شمع دل میں اگر جل جائے گی
بُری ہر تقدیر زندگی کی کاشف، پھر تو ٹل جائے گی
محبت اُن کی دل میں بسانے والے
تقدیر اپنی خود بنانے والے
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
میرا بھی اُن سے سلام کہنا
 

Rate it:
01 Jan, 2020

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: kashif imran
I live in Piplan District Miawnali... View More
Visit 160 Other Poetries by kashif imran »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City