میری رہ کی دیوار بنے ہیں

Poet: Tahir Mukhtar Tahir
By: Tahir Mukhtar Tahir , Depalpur

میری رہ کی دیوار بنے ہیں
جو لوگ مرے یار بنے ہیں

غم سارے انھوں نے ہی دیے ہیں
یہ آج جو غم خوار بنے ہیں

کالے بال، پیشانی کشادہ
ان کے نین تلوار بنے ہیں

بس جھوٹ زمانے میں پھیلانے
اتنے سارے اخبار بنے ہیں

لگتا ہے کہ اب بچھڑیں گے ہم بھی
کچھ ہجر کے آثار بنے ہیں

تمہاری مہربانی کی خاطر
کچھ اچھے بھی بیمار بنے ہیں

یہ لوگ، بڑے لوگ ہیں طاہر
جو دھوپ میں اشجار بنے ہیں

Rate it:
16 Jun, 2020

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Tahir Mukhtar Tahir
Visit 6 Other Poetries by Tahir Mukhtar Tahir »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City