میں جب وجود کے حیرت کدے سے مل رہا تھا

Poet: علی زریون
By: Dua Nasir, Sialkot

میں جب وجود کے حیرت کدے سے مل رہا تھا
مجھے لگا میں کسی معجزے سے مل رہا تھا

میں جاگتا تھا کہ جب لوگ سو چکے تھے تمام
چراغ مجھ سے مرے تجربے سے مل رہا تھا

ہوس سے ہوتا ہوا آ گیا میں عشق کی سمت
یہ سلسلہ بھی اسی راستے سے مل رہا تھا

خدا سے پہلی ملاقات ہو رہی تھی مری
میں اپنے آپ کو جب سامنے سے مل رہا تھا

عجیب لے تھی جو تاثیر دے رہی تھی مجھے
عجیب لمس تھا ہر زاویے سے مل رہا تھا

میں اس کے سینۂ شفاف کی ہری لو سے
دہک رہا تھا سو پورے مزے سے مل رہا تھا

ثواب و طاعت و تقویٰ فضیلت و القاب
پڑے ہوئے تھے کہیں میں نشے سے مل رہا تھا

ترے جمال کا بجھنا تو لازمی تھا کہ تو
بغیر عشق کئے آئنے سے مل رہا تھا

زمین بھی مرے آغوش سرخ میں تھی علیؔ
فلک بھی مجھ سے ہرے ذائقے سے مل رہا تھا

Rate it:
04 Feb, 2021

More Ali Zaryoun Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Hamariweb
Visit Other Poetries by Hamariweb »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City