وقت کٹ تو جاتا ہے راستے نہیں کٹتے

Poet: Sadaf Ghori
By: Sadaf Ghori, Quetta

وقت کٹ تو جاتا ہے راستے نہیں کٹتے
سچ ، بغیر ہمدم کے فاصلے نہیں کٹتے

جن کو دل نے چاہا ہو ، وہ جہاں کہیں جائیں
ان عزیز لوگوں سے رابطے نہیں کٹتے

اک کسک تو رہتی ہے دل کے کونے کھدرے میں
بات کاٹ دینے سے معاملے نہیں کٹتے

انگلیاں نہ زخمی کر ، جو ہے تو ، وہی ہے تو
آئینہ کھرچنے سے آئنیے نہیں کٹتے

چوریاں بھی ہوتی ہیں جنگلوں میں پیڑوں کی
سب درخت لوگوں کے سامنے نہیں کٹتے

واقعے تو کٹتے ہیں وقت کی درانتی سے
وقت کی درانتی سے سانحے نہیں کٹتے

بارہا یہ دیکھا ہے اے صدف کہ لوگوں کے
کچھ سنہری پھندے ہیں ، کاٹتے نہیں کٹتے
 

Rate it:
22 Apr, 2014

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Sadaf Ghori
Poetess, Nature Writer, Columinst, Teacher.

PUBLISHED BOOKS
1. Manzar Chunti Aankein.
2. Yehaan Jab Shaam Dhalti Hai.
3. Mohabbat Aankh Mein Gu
.. View More
Visit 149 Other Poetries by Sadaf Ghori »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City