وہ کسی بھی عکس جمال میں نہیں آئے گا

Poet: Noon Meem Danish
By: liaquat, khi

وہ کسی بھی عکس جمال میں نہیں آئے گا
وہ جواب ہے تو سوال میں نہیں آئے گا

نہیں آئے گا وہ کسی بھی حرف و بیان میں
وہ کسی نظیر و مثال میں نہیں آئے گا

اسے ڈھالنا ہے خیال میں کسی اور ڈھب
وہ شباہت و خد و خال میں نہیں آئے گا

وہ جو شہسوار ہے تیغ زن رہ زندگی
مرے ساتھ وقت زوال میں نہیں آئے گا

یہاں کون تھا جو سلامتی سے گزر گیا
یہاں کون ہے جو وبال میں نہیں آئے گا

اسے لاؤں گا میں سکوت حرف و صدا میں بھی
وہ سخن کبھی جو سوال میں نہیں آئے گا

جو ہیں منتظر بڑی دیر سے انہیں کیا خبر
نہیں آئے گا کسی حال میں نہیں آئے گا

Rate it:
11 Dec, 2019

More Noon Meem Danish Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Reading second time the poetry of Noon Meem Danish and thinking about the ability of the poet, what the words he choose to write poetry.

By: tariq, khi on Dec, 11 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City