چار سو ہے بڑی وحشت کا سماں

Poet: Fahmida Riaz
By: zaheer, khi

چار سو ہے بڑی وحشت کا سماں
کسی آسیب کا سایہ ہے یہاں

کوئی آواز سی ہے مرثیہ خواں
شہر کا شہر بنا گورستاں

ایک مخلوق جو بستی ہے یہاں
جس پہ انساں کا گزرتا ہے گماں

خود تو ساکت ہے مثال تصویر
جنبش غیر سے ہے رقص کناں

کوئی چہرہ نہیں جز زیر نقاب
نہ کوئی جسم ہے جز بے دل و جاں

علما ہیں دشمن فہم و تحقیق
کودنی شیوۂ دانش منداں

شاعر قوم پہ بن آئی ہے
کذب کیسے ہو تصوف میں نہاں

لب ہیں مصروف قصیدہ گوئی
اور آنکھوں میں ہے ذلت عریاں

سبز خط عاقبت و دیں کے اسیر
پارسا خوش تن و نو خیز جواں

یہ زن نغمہ گر و عشق شعار
یاس و حسرت سے ہوئی ہے حیراں

کس سے اب آرزوئے وصل کریں
اس خرابے میں کوئی مرد کہاں

Rate it:
04 Feb, 2020

More Fahmida Riaz Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City