چاہتا تھا

Poet: محمد صالح
By: Muhammad Sualeh , Karachi

کیا کیا تو نے اور تو کیا چاہتا تھا
محبت تھی آرزو اور جینا چاہتا تھا

گلیاں گھوم کی اس شہر کی میں
خود کو خود سے جدا چاہتا تھا

میں وہ سب ہی تو ٹہرے ہیں کافر
لگتا ہے تو خدا بننا چاہتا تھا

خواہش تھی خود کو برباد کرنے کی
پر یہ کام تو میں تنہا چاہتا تھا

جو ہو آرزو ، جہاں تم چاہو
میرا نہ سوچنا یہ کہنا چاہتا تھا

توڑ دونگا میں اک اک محل پر
اس میں ایسا کیا یہ جاننا چاہتا تھا

ازل سے رہی عداوت اس رسم سے
جینا شرط تھی اور میں مرنا چاہتا تھا

اوروں کے وقت سی کے لب میں
اپنے وقت صالح ایک مجمع چاہتا تھا

Rate it:
19 Sep, 2018

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Sualeh
Visit 4 Other Poetries by Muhammad Sualeh »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City