کربلا

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

حق پہ ڈٹ جانے کا ہی اک فلسفہ ہے کربلا
" حشر تک سارے زمانوں کی صدا ہے کربلا "

دین کی خاطر لڑے تھے یوں حسینؓ ابنِ علی
کہتے تھے اب حق کا اک ہی راستہ ہے کربلا

مل گئی جس کو بشارت جنت الفردوس کی
ہاں اُسی کا آخری یہ معرکہ ہے کربلا

چومتے تھے ہونٹ جس کے پیار سے آقاﷺ مرے
اس کا مقتل جو بنا تھا وہ جگہ ہے کربلا

نوک پر نیزے کے سر اس کا اٹھایا جائے گا
رکھ دیا سجدے میں سر رب کی رضا ہے کربلا

دین کی عظمت کی خاطر فاطمہؓ کے لال نے
سر کو اپنے یوں کٹا کے رکھ دیا ہے کربلا

ڈٹ گئے وہ حق پہ اور یوں درس ایسا دے گئے
دینِ حق پر چلنے کا بس راستہ ہے کربلا
 

Rate it:
11 Sep, 2019

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 208 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City