کہاوت کی زبانی

Poet: زاہد
By: زاہد, karachi

بہروں میں کیا بانسری ، کیا باجاہے
اندھوں کو آئینہ دینا ، بیجا ہے

کیسے دکھلائیں یہ ، نابینوں کو ہم
گرگٹوں نے , رنگ بدلا دوجا ہے

میں کہوں حاجی ، تُو کہہ ملا مجھے
ایسے اک دوجے کی , ہوتی پوجاہے

کہتے تھے اندھوں میں کانا راجا پر
اب تو اندھوں میں ، اندھا ہی راجا ہے

لٹ گیا جب پورا گھر, تو کھوجی نے
چورکی داڑھی میں ، تنکا کھوجا ہے

آس، مت ان بادلوں سے رکھنا تم
کیا ، کبھی برسا ہے وہ ، جو گرجا ہے

گنجے کو ناخن نہیں دے رب مگر
آج ہر ناخنوں والا گنجا ہے

کہنا زاہد کو بہت ہی تھا مگر
سب کہاوت ، کی زبانی بھیجا ہے

 

Rate it:
09 Mar, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: زاہد
Visit Other Poetries by زاہد »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City