ہر سِتم ایک دَم دِسمبر میں

Poet: Shahzad Qais
By: rohail, khi

ہر سِتم ایک دَم دِسمبر میں
جَم سے جاتے ہیں غم دِسمبر میں

سال بھر اِس لیے میں رویا ہُوں
دِل بھرے کم سے کم دِسمبر میں

یادیں چھٹی منانے آئیں تھیں
گھر سے نکلے نہ ہم دِسمبر میں

ہر شجر پر خَزاں نے گاڑ دِیا
ایک اُجڑا عَلَم دِسمبر میں

برف کی کرچیاں ہیں پلکوں پر
آہ! یہ چشمِ نم دِسمبر میں

دیکھ کر مارا مارا چڑیا کو
شاخ تھی قدرے خم دِسمبر میں

لمبی راتوں کا فیض ہے شاید
ضم ہُوئے غم میں غم دِسمبر میں

جوہرِ اَشک سے بغیر اَلفاظ
ڈائری کی رَقم دِسمبر میں

برف نے رَفتہ رَفتہ ڈھانپ دِئیے
تین سو دَس قدم دِسمبر میں

ریڑھ کی ہڈی تک اُتر آئے
سرد مہری ، اَلم دِسمبر میں

لیلیٰ سے بڑھ کے موت اَچھی لگی
قیس رَب کی قسم دِسمبر میں

Rate it:
12 Dec, 2019

More December Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City