یوں نہ بے نام سی سزا دیجے

Poet: ابنِ مُنیب
By: ابنِ مُنیب, سکاکا

یوں نہ بے نام سی سزا دیجے
فیصلہ جو بھی ہو سُنا دیجے

لے تو آئے ہیں آپ موجوں تک
اب سمندر میں راستہ دیجے

خانہِ درد ہے جہاں صاحب
جس سے ملیے اُسے دعا دیجے

ڈوبتا ہے سفینہِ یزداں
اب خداؤں کو ناخدا دیجے؟

ناز در ناز کیجئے گھایل
زخم در زخم حوصلہ دیجے

لمحہ لمحہ ہے فرصتِ تازہ
صبحِ ناکام کو بُھلا دیجے

دیجیے قیس کو دعائیں بس
ایسے مجنوں کو اور کیا دیجے؟

کاش منکر نکیر یوں کہہ دیں
شعر تازہ کوئی سنا دیجے

جن سے ہوتا ہو رازِ دل افشا
ایسے الفاظ کو مِٹا دیجے

دل کو رکھنا ہو صاف گر صاحب
جس سے ملیے اُسے دعا دیجے

رہ نہ جائیں مُنیبؔ محوِ خواب
وصل کی رات ہے جگا دیجے

- اِبنِ مُنیبؔ
 

Rate it:
18 Jun, 2019

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ibnay Muneeb
https://www.facebook.com/Ibnay.Muneeb.. View More
Visit 140 Other Poetries by Ibnay Muneeb »

Reviews & Comments

buhat khubsurat dil ko chhu janai wala kalam hai
buhat umda
sada khush rahain

By: Uzma, Lahore on Jun, 21 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City