یوں ہی تو۔۔۔١

Poet: Ujala Shaikh
By: Ujala Shaikh, Karachi

یوں ہی تووہ ہم سے ملے نہیں تھے
ہائےوہ وقت جو ہم جیئے نہیں تھے

رکی تھی بات یا پھرکچھ بات چل رہی تھی
نہ وہ بولے، اور بولے تو ہم بھی نہیں تھے

منزلوں کی دوڑ میں ہاں راستے بدل بیٹھے پر
نہ وہ پہنچے، اور پہنچے تو ہم بھی نہیں تھے

ہوئے جدا تو انا کوسر پہ اٹھائے اپنے
نہ وہ روئے، اور روئے تو ہم بھی نہیں تھے

ہوائوں نے تو رخ بدل لیا پھر بھی
نہ وہ لوٹے، اور لوٹے تو ہم بھی نہیں تھے

اب کے وہ اجنبی بن بیٹھے مگر
نہ وہ بھولے، اور بھولے تو ہم بھی نہیں تھے

یوں تو کہنے کو ہے آپ بیتی بہت
نہ وہ بولے، اور بولے تو ہم بھی نہیں تھے

انا پرست تھے دونو جدا ہوئے ہیں تبھی
نہ وہ سمجھے، اور سمجھے تو ہم بھی نہیں تھے

سنواب یہ بات فضول ہے جاناں
نہ وہ بدلے، اور بدلے تو ہم بھی نہیں تھے

 

Rate it:
30 Aug, 2020

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ujala Shaikh
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City