یہ کیا طلسم ہے دنیا پہ بار گزری ہے

Poet: Syed Aabid Ali Aabid
By: imran, khi

یہ کیا طلسم ہے دنیا پہ بار گزری ہے
وہ زندگی جو سر رہ گزار گزری ہے

گلوں کی گم شدگی سے سراغ ملتا ہے
کہیں چمن سے نسیم بہار گزری ہے

کہیں سحر کا اجالا ہوا ہے ہم نفسو
کہ موج برق سر شاخسار گزری ہے

رہا ہے یہ سر شوریدہ مثل شعلہ بلند
اگرچہ مجھ پہ قیامت ہزار گزری ہے

یہ حادثہ بھی ہوا ہے کہ عشق یار کی یاد
دیار قلب سے بیگانہ وار گزری ہے

انہیں کو عرض وفا کا تھا اشتیاق بہت
انہیں کو عرض وفا نا گوار گزری ہے

حریم شوق مہکتا ہے آج تک عابدؔ
یہاں سے نکہت گیسوئے یار گزری ہے

Rate it:
30 Sep, 2019

More Syed Abid Ali Abid Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City