شاہيں

Poet: علامہ اقبالBy: Umair Khan, UAE

کيا ميں نے اس خاک داں سے کنارا
جہاں رزق کا نام ہے آب و دانہ

بياباں کي خلوت خوش آتي ہے مجھ کو
ازل سے ہے فطرت مري راہبانہ

نہ باد بہاري ، نہ گلچيں ، نہ بلبل
نہ بيماري نغمہ عاشقانہ

خيابانيوں سے ہے پرہيز لازم
ادائيں ہيں ان کي بہت دلبرانہ

ہوائے بياباں سے ہوتي ہے کاري
جواں مرد کي ضربت غازيانہ

حمام و کبوتر کا بھوکا نہيں ميں
کہ ہے زندگي باز کي زاہدانہ

جھپٹنا ، پلٹنا ، پلٹ کر جھپٹنا
لہو گرم رکھنے کا ہے اک بہانہ

يہ پورب ، يہ پچھم چکوروں کي دنيا
مرا نيلگوں آسماں بيکرانہ

پرندوں کي دنيا کا درويش ہوں ميں
کہ شاہيں بناتا نہيں آشيانہ

Rate it:
Views: 1942
13 Aug, 2021