‫ماں کا مُصّلہ

Poet: Shakira Nandini
By: Shakira Nandini, Oporto

‎یہ ممکن ہے
‎کہ تُم کو لوٹنے میں دیر ہو جائے
‎دئیے بُجھنے کے باعث
‎جانی بُوجھی راہ کھو جائے
‎مرا دل
‎جاگنے کی چاہ کے ہوتے بھی سو جائے
‎بہر صورت ،اگر لوٹ آئو
‎مرے کمرے میں کچھ پَل
‎خامشی سے بیٹھ رہنا تم
‎یہاں رکھی ہوئی ہر شئے
‎بہت برسوں سے چُپ چُپ ہے
‎یہ جب باتیں کریں
‎خاموش رہنا، کچھ نہ کہنا تم
‎بس اِن کی گفتگو سُننا
‎ذرا سا کرب سہنا تم
‎مجھے معلوم ہے
‎چُھٹی تمہاری مُختصر ہو گی
‎اسی اِک آدھ ہفتے میں
‎ہزاروں کام بھی ہوں گے
‎بہت مصروفیت اوڑھے
‎وہ صبح و شام بھی ہوں گے
‎مگر ٹھہرو ،رُکو
‎اِک بات تو سُن لو
‎مرے کپڑے مرا بستر
‎سبھی خیرات کر دینا
‎کتابیں اور تحریریں
‎بھلے ردی میں دے دینا
‎صفائی گھر کی کروانا
‎ہر اک شئے کو اُجلوانا
‎مگر میرا مُصلہ
‎ہو سکے تو ساتھ لے جانا
‎اسے ہرگز نہ دھلوانا
‎یہ مَیلا ہی سہی
‎لیکن مرا برسوں کا ساتھی ہے
‎یہ میرے کرب سے واقف ہے
‎میرا رازداں ہے یہ
‎مرا محرم ،مرا ساتھی
‎مری جائے اماں ہے یہ
‎بظاہر ایک ردی شئے
‎مگر جنسِ گراں ہے یہ
‎مری آہ و بُکا
‎رچ بس گئی ہے
‎اس کے ریشوں میں
‎تمہارے واسطے
‎شب بھر دعائیں اس پہ مانگی ہیں
‎مرے سجدوں میں جو ٹپکے تھے آنسو
‎جذب ہیں اس میں

Rate it:
25 Mar, 2018

More Mother Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Dr. Shakira Nandini
I am settled in Portugal. My father was belong to Lahore, He was Migrated Muslim, formerly from Bangalore, India and my beloved (late) mother was con.. View More
Visit 320 Other Poetries by Dr. Shakira Nandini »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City