”مقتل میں اس شان سے جانا، کوئی پوچھے حسین سے“

Poet: Muhammad Saleem Qadri
By: Muhammad Saleem Qadri, Karachi

ہجر مدینہ کوئی پوچھے حسین سے
ڈوبتا ہے کیسے سفینہ، کوئی پوچھے حسین سے
شہید کے فرزند!!شہید کے بھائی
جام شہادت پینا، کوئی پوچھے حسین سے
جسم چھلنی ہے، تیروں سے تلواروں سے
زخموں کو خود ہی سینا، کوئی پوچھے حسین سے
سخت مشکل میں بھی سر جھک سکتا نہیں
سر اٹھانے کا قرینہ، کوئی پوچھے حسین سے
نانا کے دین کی حفاظت اس طرح
نرغے میں دشمنوں کے جینا، کوئی پوچھے حسین سے
اکبر و اصغر، قاسم و عباس، کہاں ہیں
لٹا کیسے یہ خزینہ، کوئی پوچھے حسین سے
ظلم و جفا کی آندھی، بھوک و پیاس بھی ہمراہ
لبوں پہ حق کا ترانہ، کوئی پوچھے حسین سے
اللہ کی رضا پہ راضی، نانا کا یہ پیارا
مقتل میں اس شان سے جانا، کوئی پوچھے حسین سے
سب کچھ لٹا کر، سر اپنا کٹا کر
قرآن سنانا، کوئی پوچھے حسین سے
جو تھے محب، اک پل میں بنے دشمن
بدلتا ہے کیسے زمانہ، کوئی پوچھے حسین سے
یذیدیت ہوئی نابود، حسینیت زندہ باد
سلیم!! ہار کے جیت جانا، کوئی حسین سے پوچھے
 

Rate it:
29 Oct, 2014

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Muhammad Saleem Qadri
Visit 7 Other Poetries by Muhammad Saleem Qadri »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City