ہالی ووڈ کی فلم پر پابندی کے بجائے خود معیاری فلمیں بنائیں

image

سینما مالکان کی جانب سے عید الفطر کے موقع پر مقامی فلموں کے بجائے غیر ملکی ہالی ووڈ فلم کو زیادہ اہمیت اور اسکرینز دینے پر جہاں بہت سے پاکستانی فنکاروں سینما مالکان پر تنقید کی وہیں کچھ فنکاروں ہمیں اپنی فملموں کا معیار بہتر کرنے کا مشورہ دے دیا۔

اداکارہ حمیمہ ملک نے اپنی انسٹاگرام اسٹوری پوسٹ کرتے ہوئے لکھا کہ پاکستانی اداکاروں اور فلم میکرز کو غیر ملکی فلموں پر پابندی کے بجائے معیاری فلمیں بنانے پر توجہ دینی چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ سینیما گھر، ٹی وی چینلز نہیں کہ جہاں پر آپ اپنی اجارہ داری یا سیاست چلاسکتے ہیں اور اپنی مرضی کے کام کی تشہیر کرسکتے ہیں۔

A post shared by Maliha Rehman (@maliharehman1)

حمیمہ ملک نے ماضی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ پہلے پاکستان میں بھارتی فلموں پر پابندی عائد کی گئی اور اب ہالی ووڈ پر بھی پابندی لگانے کا مطالبہ کیا جارہا ہے۔

اُن کا کہنا تھا کہ انڈسٹری کو غیر ملکی فلموں سے ڈرنے کے بجائے معیاری کام کرنے پر توجہ دینی چاہیے ورنہ ہر ٹی وی چینلز اور پروڈیوسرز کو اپنا اپنا سینیما گھر خریدلینا چاہیے۔

حال ہی میں ایک انٹرویو کے دوران اداکار فہد مصطفیٰ کا کہنا تھا کہ ہمیں تسلیم کرلینا چاہیے کہ ڈراما انڈسٹری کے مقابلے ہم فلم انڈسٹری نہیں بنا سکے، ہمارے پاس ٹی وی کے لیجنڈری اداکار تو موجود ہیں مگر فلموں کا کوئی بھی لیجنڈ اداکار نہیں، تاہم ہم بعض لوگوں کو زبردستی فلمی لیجنڈ بولتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کوئی مانے یا نہ مانے لیکن یہ حقیقت ہے کہ آج کسی کو بھی پاکستان کی پانچ فلموں کے نام تک یاد نہیں اور نہ ہی کسی گلوکار کو پاکستانی فلموں کے گانے آتے ہیں۔

فہد مصطفیٰ کے مطابق ہمیں ہر حال ہی میں سالانہ 70 فلمیں بنانی چاہیے، جس میں سے کم از کم 15 فلمیں ایسی ہوں جن پر ہم فخر کر سکیں کہ ہم نے اچھی فلمیں بنائیں اور پھر لوگ اپنی ہر فلم کا جائزہ لے کر یہ عہد کریں کہ اگلے سال وہ اس سے زیادہ اچھی فلم بنائیں گے۔

دوسری جانب اداکار زائد احمد نے اپنی انسٹا اسٹوری پر لکھا کہ’ ایک معیاری فلم اپنے ناظرین کو اپنی جانب خود متوجہ کر لے گی، اس بات سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ اس کے مقابلے میں اور کیا ریلیز کیا جا رہا ہے۔‘

View this post on Instagram A post shared by Lollywood talk (@lollywood_talk_offical)

اُنہوں نے مزید لکھا کہبس، اپنے معیار کو بہتر کرنے پر توجہ دیں جیسا کہ پہلے ہی ہم اپنے معیار میں کافی بہتری لاچکے ہیں آئیے، ان عجیب سے ڈاکٹروں کو اپنا کام روکنے نہ دیں۔‘

واضح رہے کہ عالمی وباکرونا سے متاثرہ پاکستان فلم انڈسٹری کی رونقیں بالآخرعیدالفطرپربحال ہوئیں اورشائقین کے لیے 5 فلمیں ریلیزکی گئیں جن کے فلمسازوں نے عوام سے خاصی توقعات وابستہ کررکھی تھیں لیکن ہالی ووڈ فلم ڈاکٹرسٹرینج نے ان تمام امیدوں پرپانی پھیردیا ہے۔

لیکن سینما گھر اب بھی مقامی پروڈکشن پر غیر ملکی پروڈکشن کو ترجیح دے رہے ہیں، جس کی وجہ سے 50 فیصد سے زیادہ اسکرینز اور یہاں تک کہ کچھ سینما گھروں میں 100فیصد اسکرینز پر غیر ملکی فلموں نے جگہ لی ہوئی ہے۔


News Source   News Source Text

مزید خبریں
آرٹ اور انٹرٹینمنٹ
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.