اشکوں سے کھیلتے ہیں بڑے ہی ملال سے

Poet: ماہم طاہر
By: Maham Tahir, Karachi

اشکوں سے کھیلتے ہیں بڑے ہی ملال سے
بیٹھے ہیں آ ج شہر میں ہم بے حال سے

کوئی پستی سے مدد کے لیے پکار رہا ہے شاید
نڈر تھے کبھی اور ا ب ڈرتے ہیں زوال سے

اظہار پسند کا ان کی حال نہ پوچھیے
دیتے ہیں مثل بھی وہ شعر کی مثال سے

کسے خط لکھنا تھا ماہ غم میں ہمیں
یہی سوچ کر پریشاں ہیں پچھلے سال سے

وقت بھی تھا،جواب بھی دینا تھا اسے دل نے
اختتام گفتگو کر گیا وہ صرف اپنے سوال سے

Rate it:
18 Feb, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Maham Tahir
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City