اے زندگی تجھ سے تھک گیا ہوں

Poet: Sana Arif
By: Sana Arif, Abbotabad

وہ مجھ سے کہہ کر چلا گیا یہ
کہ زندگی یہ ستا رہی ہے
خیال ماضی کے یاد کر کے
گۓ دنوں کو بلا رہی ہے
یہ ساری فکروں میں ڈالتی ہے
غموں کو صدیوں نہ ٹالتی ہے
ہمیں مصیبت میں ڈال کر یہ
کام بنتے بگاڑتی ہے
میں تھک گیا ہوں اب اِس سفر سے
نہیں سکت اِن دُکھوں کی اب سے
کہو کوئ اب تو زندگی سے
ذرا سا ہم پہ بھی رحم کھاۓ
گۓ ہوؤں کو منا کے لاۓ
غموں کو خوشیوں کا رنگ چڑھاۓ
نہ ہمکو بس اب اور ستاۓ
قبول ہو گر تو ساتھ دینا
نہیں تو تنہا ہی چھوڑ دینا
یہ طے ہوا اب اے زندگی پھر
کہ سفر تیرا ختم ہوا ہے
میں موت کو اب ملوں ذرا تو
تیرے دُکھوں کو پرکھ گیا ہوں
کے چلتے چلتے تیرے سفر میں
اے زندگی تجھ سے تھک گیا ہوں
 

Rate it:
12 Sep, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Sana Arif
Visit 3 Other Poetries by Sana Arif »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City