اے زندگی

Poet: Gul e Sehrai
By: گل صحرائی, Karachi

اے زندگی روز دفنائے جاتے ہیں خون سے بھری لاشیں
اس قدر بےحس لوگ زندہ اب کیوں رہ جاتے ہیں

اے زندگی روز حوس کا نشانہ بنتی ہیں بنت حوا
کھیلنے کی عمر میں زندگیاں اب کیوں ہار جاتی ہیں

اے زندگی بات حق کی کرتے ہیں آنسو خون کے رلائے جاتے ہیں
میری یاد میں روز نئے دیئے اب کیوں جلائے جاتے ہیں

اے زندگی میں روز روزی کے لیے نکلتا ہوں
میرے بچے ہر روز بھوکے اب کیوں سو جاتے ہیں

ہر رات سوجاتی ہوں نئی صبح کے انتظار میں
ہر رات نئے غم میں اب کیوں کٹ جاتی ہیں

اے زندگی میں تھک چکی ہوں تجھ سے اور تو مجھ سے
تجھے گزارنے والے انسان اب کیوں درندے بن جاتے ہیں ...

Rate it:
27 Jul, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: گل صحرائی
Visit 2 Other Poetries by گل صحرائی »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City