ترے پاس جو مجھ کو آنا پڑا ہے

Poet: Tahir Mukhtar Tahir
By: Tahir Mukhtar Tahir , Depalpur

ترے پاس جو مجھ کو آنا پڑا ہے
مجھے راستے میں زمانہ پڑا ہے

تمنّا تھی کہ جان لیتے مرا دکھ
مگر قصّہ غم کا سنانا پڑا ہے

تکبّر نے اس کو نہیں جھکنے دیا
مجھے ہاتھ پہلے بڑھانا پڑا ہے

تھکاوٹ اتر ہے گئی تو پڑھو کچھ
پلو نیچے اک خط پرانا پڑا ہے

لگایا جو میں نے محبّت کا نعرہ
سو تاوان مجھ کو لگانا پڑا ہے

گوارہ نہ کیا اس نے تو پوچھنا بھی
مجھے حال اپنا سنانا پڑا ہے

اداسی تھی اتنی کہ ہنس نہ سکا میں
تجھے دیکھ کے مسکرانا پڑا ہے

مخالف ہوا کو ہرانے کی خاطر
چراغوں کو خوں سے جلانا پڑا ہے

Rate it:
17 Mar, 2020

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Tahir Mukhtar Tahir
Visit 3 Other Poetries by Tahir Mukhtar Tahir »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City