تلخ حقیقت

Poet: ماہم طاہر
By: Maham Tahir, Karachi

کانٹوں میں تقدیر چمن بنائی جاتی ہے
یوں مرجھے ہوئے گل کی رہائی جاتی ہے

عرش دیکھتا ہے زمین کو حسرت سے ایسے
جیسے روشنی آ خری دیے کی بجھائی جاتی ہے

حصولِ محبت میں قلت بہت ہے یہاں یاروں
غربت میں ایسے عاشقوں کی فقیرائی جاتی ہے

مسافر اندھیروں میں بھٹک جاتا ہے تو
چاند سے تاریکی اس کی مٹائی جاتی ہے

زخم کو چیر کر دل میں اتر جائے جو
ایسی آ واز صبا کی گائی جاتی ہے

جفا جن کی فطرت میں شامل ہو جائے
ایسے لوگوں سے قسم وفا کیوں اٹھائی جاتی ہے

الفاظ افسردہ ہیں، اوراق نم ہو گئے ہیں
داستان بڑی مشکل سے اب سنائی جاتی ہے

تھکن کا عالم تو دیکھئے قلم بڑھتا نہیں آ گے ہم سے
دل سرشار ہے کہ موت سے اب جدائی جاتی ہے

Rate it:
13 Mar, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Maham Tahir
Visit 13 Other Poetries by Maham Tahir »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City