جام بلور

Poet: درخشندہ
By: Darakhshanda, Houston

کسی پہر خوشی کا ساغر تو کسی پہر غم کا ساغر
پی رہے ہیں تریاق زہر تو کچھ جام زہر سمجھ کر

کبھی لگے اپنی تو کبھی دیکھوں تجھ کو پرایا سمجھ کر
پی رہا ہوں میں بھی تجھ کو اپنے غم کی دوا سمجھ کر

دکھ سکھ کا ساگر اک جام بلو ر ہی تو ہے یہ زندگی
اے زندگی تجھ کو جی رہے ہیں اسکی رضا سمجھ کر

گزر گئی ہے کچھ گزر رہی ہے یوں قطرہ قطرہ زندگی
جی رہے ہیں تجھ کو آنے والے سفر کی جزا سمجھ کر

چھوٹ جائے ساغر ٹوٹ جائے تو روٹھ جائے گی زندگی
اتار لیں گے یہ جام بلور آخر دم تلک اپنی شفا سمجھ کر

خطا کار بھی ہیں نادم بھی ہوی ہم سے بندگی تیری مختصر
اس عا جز کی دعا یہی قبول کر میرے آنسوں کو التجا سمجھ کر

Rate it:
11 Oct, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Darakhshanda
About me not much to say . Born and raised in Karachi, now living abroad since last 7 to 8 years .In Pakistan has worked in educational institutes . .. View More
Visit 66 Other Poetries by Darakhshanda »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City