حالتِ سر گرداں

Poet: نعمان احمد عاجز
By: Nouman Ahmad, Frankfurt Am Main

 جَو اُس نے جُھٹلایا ہمیں، دنیا کا ہوش کھو بیٹھے
بھری محفل میں ہوئے ذلیل مگر، ہم مسکراتے رہے

دل لگی نہ بُلا میری محبت کو اے دوست
کیا خبر تجھ کو کہ ہم عشق میں ڈوبے ہیں

اٌس کو معلوم تھی دوزخ کی حقیقت تَو پھر
کیوں ہمیں یُوں اِس آگ میں جلتا چھوڑا

کسی قید پنچھی سے جاکے پُوچھ آزادی کی قدر
کہ تُم تَو آوارگی کو آزادی سمجھ بیٹھے ہو

بزمِ جاناں میں سب موجود ہیں، جاناں نہیں
کسی کو جانا ہے تَو جائے، ہمیں جانا نہیں

گر میکدہ میں مَے نہ ہو، ساقی کس کام کا
اور نمازی نہ ہو مسجد میں، قِبلہ کس نام کا

اِتنے تنہا تھے کہ رَونا تو بہت چاہا مگر
درد کو آنکھ تک آنے میں بڑا وقت لگا

کسی نے ایسا انجامِ محبت بھی کہی دیکھا ہے
کہ مُسکاں رَو پڑے ، اور آنسو مسکرانے لگے

اِسقدر محبت کے سفر میں اُڑا مزاق ہمارا
کہ رقیب پاس ، جبکہ دَوست دُور ہوئے

 

Rate it:
21 Jun, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Nouman Ahmad
Visit 3 Other Poetries by Nouman Ahmad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City