خدارا کچھ ذرا سمجھو

Poet: طارق اقبال حاوی
By: Tariq Iqbal Haavi, Lahore

یہ ہے تو رب کی جانب سے، رضا سمجھو، سزا سمجھو
نہیں ہے بات معمولی، خدارا کچھ ذرا سمجھو

سانس لینا اذیت ہو، سوچو کیسی طبیعت ہو
ہے یہ موت کی دستک، محض نہ عارضہ سمجھو

جو لقمہ بن چکے اِسکا، انہی سے کچھ سبق سیکھو
بہت تکلیف دہ ہے یہ، اسے موذی وَبا سمجھو

بناﺅ لوگوں سے دُوری، اِسی میں ہے سمجھداری
موت ہے تاک میں باہر، گھروں میں ہی بقا سمجھو

معالج جو بتاتے ہیں، سبھی تدابیر اپناﺅ
انہی پہ عمل کرنے میں، سبھی کا ہے بھلا سمجھو

بیماری سے حفاظت بھی، ہے یہ نصف ایماں بھی
طہارت کو کرو لازم، یہی باعثِ شفا سمجھو

گناہوں سے کرو توبہ، رحیم ہے وہ بخش دے گا
ہے ہر ہستی کا خالق رب، اُسی کو آسرا سمجھو
 

Rate it:
16 Jun, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Tariq Iqbal Haavi
میں شاعر ہوں ایک عام سا۔۔۔
www.facebook.com/tariq.iqbal.haavi
.. View More
Visit 146 Other Poetries by Tariq Iqbal Haavi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City