دستک

Poet: Mubeen Nisar
By: Mubeen Nisar , Islamabad

میں سونے کی کو شش کر رہا تھا
پر نیند آ نہیں رہی تھی
سانس جو میں لے رہا تھا
گویا مجھ سے دور جا رہی تھی

دل کی دھڑکن ایسے جیسے
دروازے پر کوئی دستک آرھی تھی
کوئی مجھے پکار رہا تھا
ہلکی ہلکی سی آواز آ رہی تھی

لگا کہ جیسے میرا وھم ہے
یکایک حیرانی میں ساکت ہو گیا
روح بدن سے نکل کر جا رہی تھی
دروازہ کھولنے اس سے ملنے کو
جو دستک مجھے دیر سے بلا رہی تھی

پھر دل پر جیسے کسی نے ہاتھ رکھا
جیسے مضراب نے چھو لیا ہو ساز کو
چاندنی چھن چھن کے آرہی تھی
جگمگا رھی تھی شب_بے چراغ کو

سکوت میں نغمہء دل سنائی دے رہا تھا
درد نکل کر جاتا دکھائی دے رہا تھا
نیند اب آھستہ آھستہ قدم بڑھا رہی تھی
جیسے شب_آخر ہو موت قریب آ رہی تھی

Rate it:
04 Oct, 2019

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: mubeen nisar
Business, Physics & literature... View More
Visit 240 Other Poetries by mubeen nisar »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City