ساگر نے گھڑکیاں دیں تو دریا سنبھل گیا

Poet: Hasan Shamsi
By: F.H. Siddiqui, Lucknow ( India )

چلئے کسی طرح تو یہ طوفان ٹل گیا
ساگر نے گھڑکیاں دیں تو دریا سنبھل گیا

ٹوٹے سبھی گواہ ، ہوئے کاغذات گم
قانون کے وہ دام سے سیدھا نکل گیا

پھر آج آنکھ سے مری آنسو چھلک پڑے
پھر اک کھلونے کے لئے بچہ مچل گیا

محبوب اس کو لوگ سمجھنے لگے مرا
نازک سا اک خیال جو غزلوں میں ڈھل گیا

ناکامیاں ملیں وہ اصول و ضمیر سے
سارا ہی زندگی کا نظر یہ بدل گیا

کر کے ستم ہزار ، وہ نادم جو ہو گیا
دل بھی ہمارا موم تھا ‘ پل میں پگھل گیا

سر تھا انا سے چور ، تکبر تھا چال میں
گیلی زمین پر پڑا ، پائوں پھسل گیا

ظلمت میں ساتھ چھو ڑ کے جاتا بنا کہیں
اپنا ہی سایہ دیکھو ‘حسن ‘ مجھ کو چھل گیا

Rate it:
17 Mar, 2015

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: F.H.SIDDIQUI
*Social science teacher and trainer

.. View More
Visit 158 Other Poetries by F.H.SIDDIQUI »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City