میں سوچتی ہی رہی وہ پوچھتا ہی رہا

Poet: Dr. Shakira Nandini
By: Dr. Shakira Nandini, Porto

اس نے مجھ سے پوچھا
علم کیسے ملے؟
میں نے کہا
کوشش سے
اس نے کہا
عمل کیسے ہو اس پر؟
میں نے کہا
نیت سے
اس نے کہا
نیت کیسے بنے ؟
میں نے کہا
ارادوں سے
اس نے پوچھا
ارادے کیسے بنیں؟
میں نے کہا
نیت کے خالص ہونے سے
اس نے کہا
نیت خالص کیسے ہو ؟
میں چپ رہی
کہ کیا بولوں
مال کے خالص ہونے سے بولوں
عبادت کے خالص ہونے کو لکھوں
شخصیت کی تعمیر کے خالص ہونے کو
سوچ کے خالص ہونے کو لکھوں نفس سے
یا نفسیات کے خالص ہونے کو لکھوں فحاشی سے
اپنی معاشرت یا معیشت کو خالص لکھوں غبن سے
یا عبادات کے خالص ہونے کو لکھوں فائدے سے
پھر یوں ہوا کہ چپ طوالت پکڑ تی گئی
میں سوچتی ہی رہی وہ پوچھتا ہی رہا
یہاں تک کہ نا خالص عمر کی مدت تمام ہوئی۔

Rate it:
04 Sep, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Dr. Shakira Nandini
I am settled in Portugal. My father was belong to Lahore, He was Migrated Muslim, formerly from Bangalore, India and my beloved (late) mother was con.. View More
Visit 320 Other Poetries by Dr. Shakira Nandini »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City