وہ پلائیں تو کیا تماشا ہو

Poet: ابنِ مُنیب
By: ابنِ مُنیب, سکاکا

(ساغر صدیقی کی زمین میں، ایک طرحی مشاعرے کے لیے۔ واوین میں مصرعے ساغر کے ہیں۔)

وہ پلائیں تو کیا تماشا ہو
شیخ آئیں تو کیا تماشا ہو

صحنِ مسجد میں بیٹھ کر واعظ
دل مِلائیں تو کیا تماشا ہو

جن کی گزری ہو عمر سجدوں میں
سر اٹھائیں تو کیا تماشا ہو

تیرے وعدے کا حشْر ہو برپا
"ہم نہ جائیں تو کیا تماشا ہو"

تیرے مقتول تیری چاہت میں
"لوٹ آئیں تو کیا تماشا ہو"

جن کو سمجھے ہیں بے زُباں ہم تم
لب ہلائیں تو کیا تماشا ہو
 

Rate it:
22 Feb, 2020

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ibnay Muneeb
https://www.facebook.com/Ibnay.Muneeb.. View More
Visit 152 Other Poetries by Ibnay Muneeb »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City