کتاب حیات

Poet: ماہ نور نثار
By: ماہ نور نثار, Narowal

یہ زندگی کتاب ہے
کچھ باب جس میں لکھے ہوئے
تو ان سے رہنمائ لے
اورکتاب کا اختتام کر
جو مقصد حیات ہے
اسے دل کے تو قریب کر
جو چلا گیا ہے کارواں
نہ اس کو تو آواز دے
یہ زندگی کا کھیل ہے
کوئ چلا گیا کوئ آ گیا
کچھ پا لیا کچھ کھو دیا
یہ تیرا نصیب ہے مان
جا زرا سوچ کر تو رکھ قدم
یہاں راستے عجیب ہیں
کوئ چن گیا ہے خار تو
کوئ کرچیاں بچھا گیا
نہ اپنے راز دار رکھ
نہ بے شمار تو یار رکھ
جس سے دل لگا لیا
پھر اس پہ اعتبار رکھ
نہ کسی کا دل دکھایا کر
نہ کسی کو تو آزمایا کر
تو خدا نہیں ہے یاد رکھ
تو خدا نہیں ہے یاد رکھ

Rate it:
22 Jun, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: ماہ نور نثار
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City