ہاتھ آ کر لگا گیا کوئی

Poet: Kaifi Azmi
By: adnan, khi

ہاتھ آ کر لگا گیا کوئی
میرا چھپر اٹھا گیا کوئی

لگ گیا اک مشین میں میں بھی
شہر میں لے کے آ گیا کوئی

میں کھڑا تھا کہ پیٹھ پر میری
اشتہار اک لگا گیا کوئی

یہ صدی دھوپ کو ترستی ہے
جیسے سورج کو کھا گیا کوئی

ایسی مہنگائی ہے کہ چہرہ بھی
بیچ کے اپنا کھا گیا کوئی

اب وہ ارمان ہیں نہ وہ سپنے
سب کبوتر اڑا گیا کوئی

وہ گئے جب سے ایسا لگتا ہے
چھوٹا موٹا خدا گیا کوئی

میرا بچپن بھی ساتھ لے آیا
گاؤں سے جب بھی آ گیا کوئی

Rate it:
01 Nov, 2019

More Kaifi Azmi Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Love to read the poetry 'Hath Laga Kai Agaya Koi' by Kaifi Azmi on this page, I love to read the Ghazal of him.

By: rabia, khi on Nov, 02 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City