ہے کوئی پسِ پردہ؟

Poet: ابنِ مُنیب
By: ابنِ مُنیب, سکاکا

ہے کوئی پسِ پردہ؟ مر جائیں تو کیا ہو گا؟
کیا سچ ہے خدا جانے، سُنتے ہیں خدا ہو گا

پہنچا ہے ہمِیں تک پھر، قصہ غمِ اُلفت کا
ہم کو جو سناتے ہو، ہم سے ہی سُنا ہو گا

کچھ عار نہیں اِس میں، حالت ہی ہماری تھی
کہتے تھے سبھی "پاگل"، تم نے بھی کہا ہو گا

بے ہوش پڑے ہیں کیوں، جنت کے مکیں ہر سُو
دیکھا نہ کبھی جس کو، دیکھا نہ گیا ہو گا

اُمّید کے سائے میں، ہوتے ہیں ستم لاکھوں
سو بار جو دل اُجڑا، سو بار بسا ہو گا

بس چَین کی موت آئے، کچھ بار نہ ہو دل پر
ہر اِک سے بھلائی کر، اپنا ہی بھلا ہو گا
 

Rate it:
27 Sep, 2019

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ibnay Muneeb
https://www.facebook.com/Ibnay.Muneeb.. View More
Visit 140 Other Poetries by Ibnay Muneeb »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City