سعودی عرب کی پہلی فیچر فلم کی پری پروڈکشن شروع

image

سعودی عرب کی پہلی مقامی فیچر فلم ’’نورہ‘‘کی پری پروڈکشن کردیا گیا جبکہ فلم کی عکس بندی کیلئے خوبصورت مقام ’الولا‘کو بھی کھول دیا گیا۔

عرب نیوز کے فلم الولا،رائل کمیشن فار الولاکی مووی ایجنسی نے جمعرات کواعلان کیا کہ رفیق زیدی کی تحریر وہدایت میں بننے والی سعودی فیچر فلم ’نورہ‘ کی پری پروڈکشن کا آغاز کردیا گیا ہے۔

اس سلسلے میں بلیک شوگرپکچرز اور نیبراس فلمز کی طرف سے تیاریاں شروع کی جاچکی ہیں اور فلم بندی اگلے مہینے شروع کردی جائے گی۔

فلم نورہ فلمسازالزیدی کی پہلی خصوصیت کی حامل فلم ہوگی جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ رفیق زیدی مملکت میں سینما کی نئی لہر کے رکن ہوں گے۔

فلمساز الزیدی نے نورہ کے بارے میں تفصیل بتاتے ہوئے کہا کہ یہ فلم پہلی گھریلو فیچر فلم بھی ہوگی جسے مکمل طور پر الولا کے مقام پر شوٹ کیا جائے گا۔

فلم ’نورہ‘ آرٹ کے ساتھ ہمارے تعلقات اور لوگوں کے درمیان رابطے کے ایک ذریعے کے طور پر ترجمہ کرنے کی اُس طاقت کو تلاش کرتی ہے جو معاشرے میں تبدیلی لاسکتے ہیں۔

یہ فلم1990کی دہائی کے معاشرے کو اُن رواجوں کو فوکس کرتی ہے جب قدامت پسندی اپنے عروج پر تھی یہاں تک کہ آرٹ اور پیٹنگز کی بھی تمام اقسام پر سخت پابندی عائد تھی۔

نورہ گاؤں میں رہنے والی ایک نوجوان دوشیزہ ہے جب اُس پتہ پتہ چلتا ہے کہ اُس کے گاؤں میں نادر نامی ایک آرٹسٹ ہے جوپورٹریٹ بنانے کا ماہر آرٹسٹ ہے تو نورہ اپنا پورٹریٹ بنوانے کے لئےگھر سے نکلتی ہے جہاں آرٹسٹ کا فنکارانہ جذبہ بیدار ہوتا ہے اور وہ نورہ کو ایک خوبصورت دنیا سے متعارف کراتا ہے۔


News Source   News Source Text

مزید خبریں
آرٹ اور انٹرٹینمنٹ
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.