چاند کی مٹی میں پودے اگانے کا کامیاب تجربہ

image

سائنس دانوں نے پہلی مرتبہ چاند سے حاصل کردہ مٹی میں پودے اگانے کا کامیاب تجربہ کرلیا۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے (اے ایف پی) کے مطابق جمعرات کو کمیونیکیشنز بایولوجی کے جریدے میں چاند سے حاصل کردہ مٹی میں پودے اگانے کے تجربے کی تفصیلات سامنے آئی ہیں، جس نے محققین کو امید دلائی ہے کہ ایک دن براہ راست چاند پر پودے اگانا ممکن ہوگا۔

ماہرین اسے خلائی زراعت کے حوالے سے انسان کے علم میں بڑی پیشرفت قرار دے رہے ہیں۔ اس سے مستقبل کے خلائی مشنوں کو بہت زیادہ پریشانی کا سامنا نہیں کرنا پڑیگا اور ان کے اخراجات کی بھی بچت ممکن ہوگی، علاوہ ازیں اس سے خلاء میں دیر اور دور تک کے سفر کی سہولت بھی پیدا ہوگی۔

تاہم اس تحقیق سے وابستہ یونیورسٹی آف فلوریڈا کے مصنفین کے مطابق اس موضوع پر ابھی مفصل مطالعہ کرنا باقی ہے۔

امریکی خلائی ایجنسی کے سربراہ بل نیلسن نے کہا ہے کہ یہ تحقیق ناسا کے طویل مدتی تحقیقی اہداف کیلئے اہم ہے، ہمیں چاند اور مریخ پر پائے جانے والے وسائل کو استعمال کرنے کی ضرورت ہوگی تاکہ مستقبل کے خلاء بازوں کیلئے خلاء میں دور رہنے اور کام کرنے کیلئے خوراک کے ذرائع مہیا کئے جاسکیں۔

اپنے تجربے کیلئے محققین نے اپالو 11، 12 اور 17 مشنوں کے دوران چاند کے مختلف مقامات سے اکھٹی کی گئی مٹی کا صرف 12 گرام استعمال کیا۔

محققین نے اس تجربے کیلئے سرسوں سے ملتے جلتے پودے ارابڈوپسز تھالیانا لگانے کا انتخاب کیا کیونکہ یہ آسانی سے اگتا ہے اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ اس کا پہلے ہی بڑے پیمانے پر مطالعہ کیا جاچکا ہے۔

ایک کنٹرول گروپ کے طور پر بیج زمین سے مٹی میں بھی لگائے گئے اور ساتھ ہی چاند اور مریخ کی مٹی کے نمونوں میں بھی لگائے گئے۔ نتیجہ یہ ہوا کہ دو دن کے بعد چاند کے نمونوں سمیت سب میں وہ پودے اگ آئے۔

اس تحقیقی مقالے کی مصنفہ انا لیزا پال نے ایک بیان میں کہا کہ ہر پودا چاہے وہ چاند (کی مٹی) کے نمونے میں ہو یا کنٹرول گروپ میں، چھٹے دن تک ایک جیسا نظر آرہا تھا۔

لیکن اس کے بعد ان پودوں میں فرق ظاہر ہونا شروع ہوگیا اور چاند کے نمونوں میں پودے آہستہ آہستہ بڑھے اور ان کی جڑیں کم ہوگئیں۔ اس کے 20 دن کے بعد سائنس دانوں نے تمام پودوں کو کاٹنے کے بعد ان کے ڈی این اے کا مطالعہ کیا۔

ان کے تجزیے سے پتہ چلا کہ چاند کی مٹی پر لگائے گئے پودوں نے ناسازگار ماحول میں اگنے والے پودوں کی طرح ردعمل ظاہر کیا تھا جیسا بہت زیادہ نمکیات اور بھاری دھاتوں والی مٹی میں ہوتا ہے۔

اب سائنسدان یہ سمجھنا چاہتے ہیں کہ اس ماحول کو پودوں کیلئے مزید سازگار کیسے بنایا جاسکتا ہے۔


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
سائنس اور ٹیکنالوجی
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.