أٸینہِ فریب ہم نے خود کو ، دِکھا رکھا تھا

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

أٸینہِ فریب ہم نے خود کو ، دِکھا رکھا تھا
تری سرکشی کو بھی ہنسی میں ، اُڑا رکھا تھا

خلقتِ عام میں تو تم پہلے ہی سے تھے رسوا جاناں
وہ تو ہم نے ہی تمہیں سر پہ ، بٹھا رکھا تھا

تم تو پہلے ہی کر چکے تھے ترکِ تعلق کا قصد
ہماری صَرف نظری نے ہی یہ رشتہ ، بچا رکھا تھا

اور کچھ یوں بھی ممکن نہ تھا اس رشتے کو دوام
دل ہی دل تم نے ہمیں نظروں سے ، گرا رکھا تھا

اخلاق دیکھو تو زرا اس مزاجِ وقت کی ظلمت
ہے اب مرتبوں کا فرق کبھی ایک ، بنا رکھا تھا

Rate it:
18 Oct, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 111 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City