اب تو وعدہ بھی کچھ نہیں لگتے

Poet: سمیعہ سہیل
By: Samia Saad, Sargodha

اب تو وعدے بھی کچھ نہیں لگتے
وہ ارادے بھی کچھ نہیں لگتے
جب سے بدلا ہے تو نے خود کو
ہم کو سناٹے بھی کچھ نہیں لگتے
صاف کہہ دیتے کہ تم کو جانا ہے
صاف کہہ دیتے کہ تم کو جانا ہے
اب تم ہمارے کچھ نہیں لگتے
اب کے شکوہ کریں بھی تو کس سے کریں
وہ جو ہمارے تھے اب نہیں لگتے

چاند تاروں سے بھی اب میں پوچھ بیٹھی ہوں
جو ہماری نہیں لگتے، کیا اب وہ تمہارے بھی نہیں لگتے
سمی درد اٹھتا ہے اب کہ اس سینے میں
دل کو سمجھا ہی لیتے ہیں کہ وہ بدلیں ہیں
جو ہمارے نہیں لگتے اے دل اب وہ تمہارے بھی نہیں لگتے

Rate it:
10 Feb, 2021

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Samia Saad
Visit 3 Other Poetries by Samia Saad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>