ان سے ملنے کی امید نظر نہیں آتی

Poet: Hammad khan
By: Hammad khan, Jampur

ان سے ملنے کی امید نظر نہیں آتی
دل بیتاب ہے کوئی خبر نہیں آتی

چرچا تھا سارے شہر میں جس دھن کا
اب کسی کو وہ آواز شام و سحر نہیں آتی

میرے تنہائی میں رہتے تھے صدا سات میرے
الٰہی! پھر انہیں میری یاد کیونکر نہیں آتی

اِک اُداسی چھاگی ہے دیار دل میں
مدت ہوئی کہ رونق میرے گھر نہیں اتی

کیسے بھول جاؤں حماد وہ خوبصورت لمحے
کہ گزری ہوئی گھڑی دوبارہ پھر نہیں اتی

Rate it:
06 May, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Hammad khan
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City