اپنا لہجہ میری بات میں شامِل نہ کرو

Poet: احسن خورشید
By: Ahsan Khurshid, Islamabad

اپنا لہجہ میری بات میں شامِل نہ کرو
اپنی خوشیاں میری ذات میں شامِل نہ کرو

میں جو تنہا ھوں تو تنہا ہی رہنے دو مُجھے
اپنی جیت میری مات میں شامِل نہ کرو

میرے آنسو ہیں میری آنکھوں سے ٹپکنے دو انہیں
اپنی بوندیں میری برسات میں شامِل نہ کرو

میرے نغمے ہیں میرے غم کی نُمائش کے لیئے
اپنے گیت میرے نغمات میں شامِل نہ کرو

میری دھڑکن تو دھڑکتی ہے فقط مَرنے کے لیئے
اپنا جِیوَن میری وفات میں شامِل نہ کرو

مُجھےگمنام سا کہتے ہیں یہ زمانے والے
اپنا معیار میری اوقات میں شامِل نہ کرو

Rate it:
10 Jan, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ahsan Khurshid
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City