اک تیر ہوں نکل چکا ہوں کمان سے

Poet: مبین نثار
By: Mubeen Nisar, Islamabad

اک تیر ہوں نکل چکا ہوں کمان سے
تخیل ہے بڑھ کے سوچتا ہے گمان سے

یہ بھی کر لوں وہ بھی کر لوں کتنے کام ہیں
کتنے چلے گئے کہتے کہتے جہان سے

سورج ڈوب گیا چاند ستاروں کی چنر اڑھے
حیرت سے تکتا ہے کہتا نہیں کچھ زبان سے

کھیل اپنے آخری منظر میں داخل ہوگیا ہے
پردھ سرکتا جا رھا ہے اطمینان سے

زھر کا پیالہ پی کےکوئی مرتا نہیں ہے
سقراط آج بھی زندہ ہے فلسفے کے جہان میں

شدت_ پیاس نے جب جان لے لی مبین
کھل کے برسا پھر بادل آسمان سے

Rate it:
16 Mar, 2018

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: mubeen nisar
Business, Physics & literature... View More
Visit 240 Other Poetries by mubeen nisar »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City